Saturday, April 17, 2021

چین نے ٹرمپ کی امریکی پابندیوں کا مقابلہ کرنے کیلئے ملکی قانون نافذ کر دیا

گذشتہ دنوں صدر ٹرمپ نے آٹھ چینی ایپس کے ساتھ سودے پر پابندی عائد کرنے کے ایک ایگزیکٹو آرڈر پر دستخط کیے جن میں ادائیگی کے مشہور پلیٹ فارم الی پے کے ساتھ ساتھ وی چیٹ پے بھی شامل ہیں

چین ان نئی امریکی پابندیوں کی بھرمار کے خلاف جوابی حکمت عملی اختیار کر رہا ہے جو اس کی ملکی فرموں کو بلاجواز غیر ملکی قوانین سے نقصان پہنچا سکتی ہیں۔

حالیہ اعلان کردہ تبدیلیاں چینی عدالتوں کو ایسی غیر ضروری اور معیشت شکن پابندیوں کی تعمیل کرنے والی کمپنیوں کو سزا دینے کی اجازت دیتی ہیں۔ یاد رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے عائد کردہ پابندیوں نے چینی کمپنیوں کو نشانہ بنایا ہے۔ کیوکہ صدر ٹرمپ کے خیال میں وہ امریکی قومی سلامتی کے لئے خطرہ ہیں۔ ان اقدامات میں بلیک لسٹ فرموں کو حصے کی فراہمی کرنے والی کمپنیوں کو سزا دینا شامل ہے۔

نیویارک اسٹاک ایکسچینج میں درج تین بڑی چینی ٹیلی کام کمپنیوں سے توقع کی جارہی ہے کہ وہ فوج کے ساتھ مبینہ تعلقات کی بنا پر اپنے حصص کو فہرست میں لائیں گے۔ این وائی ایس ای نومبر میں مسٹر ٹرمپ کے دستخط کردہ ایک ایگزیکٹو آرڈر کی بنیاد پر چائنا موبائل ، چائنا ٹیلی کام اور چائنا یونیکم ہانگ کانگ کو ہٹا رہا ہے۔

یہ فہرستیں حالیہ مہینوں میں چینی کمپنیوں کے خلاف ٹک ٹوک ، ہواوے موبائیل اور مائیکرو چیپ بنانے والی کمپنی سیمیکمڈکٹر مینوفیکچرنگ انٹرنیشنل کارپوریشن کے خلاف کارروائیوں کے بعد بنائی گئی ہیں۔

گذشتہ دنوں مسٹر ٹرمپ نے آٹھ چینی ایپس کے ساتھ سودے پر پابندی عائد کرنے کے ایک ایگزیکٹو آرڈر پر دستخط کیے جن میں مشہور ادائیگی کے پلیٹ فارم الی پے کے ساتھ ساتھ وی چیٹ پے بھی شامل ہیں۔ امریکی صدر کا دعوی ہے کہ ایسی ٹیک کمپنیاں مجرمانہ طور پر چینی حکومت کے ساتھ ڈیٹا شیئر کرتی ہیں۔

ہفتہ کے روز ایک بیان میں چین کی وزارت تجارت نے امریکی قوانین کے بلاجواز غیر علاقائی درخواست کے خلاف مقابلہ سے متعلق نئے قوانین و قواعد متعارف کرائے ہیں۔

سنگاپور کی نیشنل یونیورسٹی میں ایسٹ ایشین انسٹی ٹیوٹ کے ڈائریکٹر برٹ ہوف مین نے کہا کہ غیر قانونی قانون سازی کی درخواست سے مجروح ہونے والے قانونی افراد عدالت میں قانونی کارروائی جاری کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ انڈسٹری مالکان اس سے ہونے والے نقصان کا معاوضہ لے سکتے ہیں۔ انہوں نے مذید کہا کہ حکومت دیگر جوابی اقدامات بھی اٹھا سکتی ہے۔

فوری طور پر نافذ ہوئے والے ان اقدامات میں براہ راست امریکہ کا ذکر نہیں ہے ۔  حالانکہ چین نے طویل عرصے سے امریکی پابندیوں اور تجارت پر پابندیوں کے بارے میں مسلسل شکایات کی ہیں۔

اس حوالے سے قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ واضح نہیں ہے کہ نئے قانون کو کس طرح نافذ کیا جائے گا۔ ایک نکتہ جس کی وضاحت کرنا باقی ہے وہ یہ ہے کہ آیا اس آرڈر کا مقصد چین کے خلاف پابندیوں کو خاص طور پر نشانہ بنانا ہے یا ایران یا روس جیسے ممالک کی ان کمپنیوں کو نشانہ بنانے والی پابندیوں کو اجاگر کرنا ہے ، جو چینی کمپنیوں پر نقصان دہ اثر ڈالتی ہیں

چین میں کاروباری دلچسپی رکھنے والی کمپنیوں کو بہت احتیاط سے کام کرنے کی ضرورت ہے۔ ہانگ کانگ یونیورسٹی کی چینی قانون کی پروفیسر انجیلا ژانگ نے مزید کہا کہ اس منظر نامے پر غور کریں کہ ایک یورپی بینک ایسے قانون کے ذریعے ایک چینی اہلکار کے اثاثے منجمد کردیتا ہے ، جسے امریکہ نے منظور کیا تھا۔ لہذا اب چینی قانون اس کاروباری شخص کو یوروپی ملک پر مقدمہ چلانے کی اجازت دے گا ۔ جس سے وہ یورپی بینک سے اپنے نقصان کی وصولی کر سکے گا۔

مسٹر ٹرنر کا خیال ہے کہ چین ان آئندہ پابندیوں کے خلاف بھی اپنی حفاظت کیلئے حکمت عملی تیار کر رہا ہے جو صدر ٹرمپ اس ماہ کے آخر میں وائٹ ہاؤس چھوڑنے سے پہلے عائد کر سکتے ہیں۔

پاک آرمی کے پاکستان میڈ ٹینک الخالد 2 کے بارے یہ مضمون بھی پڑھیں

پاکستان کا نیا ٹینک ۔ الخالد – 2 ، ترکی ساختہ الیکٹرانکس اور آپٹیکل سینسرز سسٹم کے ساتھ

LATEST NEWS

CHINESE NEWS

OUR DEFENCE NEWS SITE

spot_img

INDIAN NEWS